اب ہر کمزور طبقات کوانصاف ملے گا کیونکہ ۔۔۔ وزیر اعظم عمران خان نے قوم کو بڑا سرپرائز دے ڈالا

" >

اسلام آباد(ویب ڈیسک)وزیر اعظم عمران خان نے کہا ہے کہ مزدور طبقات کی انصاف تک رسائی میں مدر ریاست کی ذمہ داری ہے۔ان خیالات کا اظہار انھوں نے قانونی اصلاحات سےمتعلق اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے کیا۔ ان کا کہنا تھا کہ قوانین میں ترمیم یقینی بنائیں، تاکہ طویل مقدمات کاجلد فیصلہ ہوسکے۔ملکی دولت لوٹنے والوں

سے رقم واپس نکلوانا قوم کے دل کی آواز ہے۔وزیر اعظم نے کہا کہ انصاف کی فراہمی میں تاخیربھی انصاف نہ ملنے کے مترادف ہے، کمزور طبقات کی انصاف تک رسائی میں مدر کرنا لازم ہے۔انھوں نے کہا کہ حکومت ذمے داری کا احساس کرتے ہوئے قانون سازی کررہی ہے، کوشش ہوگی غریبوں کوریاست کی جانب سےقانونی معاونت ملے۔معمولی جرائم میں جرمانہ ادا نہ کرنے پر لوگ اب بھی قید ہیں، امتیازی سلوک روارکھاجاناعدل وانصاف کےاصولوں کی نفی ہے، ملکی دولت لوٹنے والوں سے رقم واپس نکلوانا قوم کے دل کی آواز ہے۔خیال رہے کہ آج مظفر آباد میں جلسے سے خطاب کرتے ہوئے وزیر اعظم نے کہا تھا کہ نریندر مودی نے کوئی حرکت کی تو اینٹ کا جواب پتھر سے آئے گا ، دنیا سے کہتاہوں کہ ہندوستان کے ہٹلر کو روکو ، مودی جو کشمیر میں کررہاہے اس کا ردعمل آئے گا۔جبکہ دوسری جانب ایک خبر وزیراعظم پاکستان عمران خان نے کہا ہے کہ میں نے کشمیر کا سفیر بننے کا فیصلہ کیا اور ہر جگہ کشمیریوںکیلئے آواز بلند کی، اگلے ہفتے اقوام متحدہ کی جنرل اسمبلی میں شرکت کیلئے جا رہا ہوں، انشاءاللہ وہاں بھی اپنے کشمیری بھائیوں کو مایوس نہیں کروں گا۔ مودی! کان کھول کر سن لو، ایمان والا آدمی ڈرتا نہیں، اگر پاکستان کیخلاف ہرزہ سرائی کی گئی تو اینٹ کا جواب پتھر سے دیا جائے گا۔مظفر آباد میں خطاب کرتے ہوئے وزیراعظم پاکستان عمران خان نے کہا کہ میں نے کشمیر کا دنیا میں سفیر بننے کا فیصلہ کیا کیونکہ میں پاکستانی، مسلمان اور انسان ہوں اور کشمیر کا

مسئلہ اس وقت انسانیت کا مسئلہ ہے۔ 40 دنوں سے ہمارے کشمیری بھائی، بہنیں، بزرگ، بچے، کرفیو کے نیچے ہیں اور میں آج خاص طور پر نریندر مودی آپ کو یہاں سے پیغام دینا چاہتا ہوں کہ صرف بزدل لوگ اور بزدل انسان ہی انسانوں پر ایسا ظلم کرتا ہے جو آج کشمیریوں پر ہندوستان کی نو لاکھ کر رہی ہے۔ جس میں انسانیت ہوتی ہے وہ کبھی یہ نہیں کر سکتا، ایک دلیر انسان کبھی عورتوں اور بچوں پر ظلم نہیں کر سکتا، نریندر مودی اور اس کی انتہاءپسند جماعت آر ایس ایس آج کشمیر میں جو کچھ کر رہی ہے، میں یہ بتانا چاہتا ہوں کہ آپ جتنا مرضی ظلم کر لیں، آپ کامیاب نہیں ہوں گے کیونکہ کشمیر کی عوام، بچے، خواتین اور نوجوانوں کے اندر موت کا خوف ختم ہو چکا ہے اس لئے آپ انہیں شکست نہیں دے سکتے۔انہوں نے کہا کہ ہم سب کو پتہ ہونا چاہئے نریندر مودی آر ایس ایس کا بچپن کا ممبر ہے اور یہ وہ جماعت ہے جس کے اندر مسلمانوں کی نفرت بھری ہوئی ہے۔ آج سے سو سال پہلے جو جماعت بنی تھی، اس کے صرف دو مقصد تھے کہ ہندوستان صرف ہندوﺅں کیلئے ہے اور مسلمانوں کو یہاں سے نکالنا ہے۔ ان میں مسلمانوں کیخلاف نفرت اس لئے بھری ہوئی ہے کہ یہ سمجھتے ہیں اگر مسلمانوں کی صدیوں سے ہندوستان پر حکومت نہ ہوتی تو ہندوستان کتنی بڑی سپر پاور بن چکی ہوتی۔ یہ مسلمانوں کو اس حکمرانی کا سبق سکھانا چاہتے تھے لیکن میں آج نریندری مودی اور ہندوستان کو کہنا چاہتا ہوں کہ میں ساری دنیا میں کشمیر کا سفیر بن کر جاﺅں گا اور دنیا کو آر ایس ایس کی اصلیت بتاﺅں گا۔ جس طرح ہٹلر اور نازی پارٹی نے جرمنی میں اقلیتوں پر ظلم کیا، جس طرح انہوں نے انسانوں کا قتل عام کیا، یہ بھی اس راستے پر چل رہے ہیں، آر ایس ایس کے بانی ہٹلر اور مرسلینی کو رول ماڈل مانتے تھے اور وہ بھی چاہتے تھے کہ مسلمانوں کو ہندوستان سے نکالا جائے۔ آج کشمیر میں آر ایس ایس کی آئیڈیالوجی کے مطابق سب کچھ ہو رہا ہے لیکن اس کا بہت بڑا نقصان ہندوستان کو ہو گا کیونکہ ہندوستان میں اعتدال پسند، پڑھے لکھے اور روشن خیال لوگوں کیلئے وہ ہندوستان بننے جا رہا ہے جو نہ نہرو چاہتا تھا اور نہ گاندھی چاہتا تھا بلکہ اسی آر ایس ایس کی آئیڈیالوجی نے ہی گاندھی کا قتل کیا تھا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں